4 Lines Poetry4 Lines Sad Poetry|4 Lines Shayari

4 lines poetry


آسماں دیکھ رھا تھا مجھے حیرانی سے

یہ میرا پہلا تعارف تھا پریشانی سے

میری تعلیم بھلا کیسے مکمل ہوتی 

ایک تو عشق ہوا، عشق بھی استانی سے

Asmaan Dekh Raha Tha Mujhko Herani Se

Ye Mera Pehla Taraf  Tha Pareshani Se

Meri Taleem Bhala Keasy Mumkin Hoti

      Aik Tou Ishq Hova,Ishq Bhe Ustani Se



کیا ضروری ہے کہ ہر بات کی تصدیق بھی ہو

وہ جو نزدیک نظر آتا ہے، نزدیک بھی ہو

تم اگر صاحب رائے ہو تو لازم تو نہیں!

تم جسے ٹھیک سمجھتے ہو، ٹھیک بھی ہو

Kya Zaroori Hai K Har Baat Ki Tasdeeq Bhe Ho

Wo Jo Nazdeeq Nazar Aata Hai,Nazdeeq Bhe Ho

Tum Agr Sahib e Ray Ho To Lazim Tou Nhi

Tum Jisy Theek Smjhty Ho,Theek Bhe Ho


Parveen Shakir|Best Parven Shakir Poetry|Parveen Shakir Poetry|Urdu Edge.com


حال اچھا ہو تو ہو جاتے ہیں چُپ لوگ یہاں 

ورنہ ہر ایک کو  بتلائیے " اب کیسے ہیں 

زخم بھر جاتے مگر اُف یہ کُھرچنے والے 

روز آ جاتے ہیں " دِکھلائیے اب کیسے ہیں 

Haal Acha Ho Tou Ho Jaty Hain Chup Log Yhaan

Warna Har Aik Ko Bulaiye Ab Keasy Hain

Zakhm Bhr Jaty Magr Uff Ye Khurachny Waly

Roz Aa Jaty Hain  Dekhlaiye Ab Keasy Hain



سنو !

تمهیں کوئی فرق پڑتا هے

میرے هونے یا نہ هونے سے

میرے هنسنے سے رونے سے

میرے لفظوں سے یا میرے

بہت خاموش هونے سے

Suno

Tujhy Koi Farq Parta Hai

Mere Hony Ya Na Hony Se

Mere Hans'ny Se Rony Se

Mere Lafzon Se Ya Mere

Bht Khamosh Hony Se



کچھ وقت گزرا، اور پھر انکے.. 

رویئے تلخ!

لہجے سخت!

اور محبتیں پھیکی پڑنے لگی

Kuch Waqt Guzra,Aur Phr Unky

Rawaiye Talkh,

Lehjy Sakht,

Aur Mohabbaten Pehki Parny Lagi



‏زندگی آج ہے تو کل نہیں ہے

اب نبھانے میں تو مشکل نہیں ہے

آؤ، بیٹھو کوئی تو بات کرو

خودکشی مسئلے کا حل نہیں ہے

Zindagi Aaj Hai Tou Kal Nahi Hai

Ab Nibhany Mein Tou Mushkil Nahi Hai

Aao,Beitho Koi Tou Baat Karo

Khud'Khushi Masly Ka Hal Nahi Hai



بلهے شاہ اساں جوگی ہوئے

ساڈے سپاں نال یارانے

ساڈے انگ انگ زہر چڑهیا

ساڈا درد کوئی نہ جانے

Buly Shah Asaan Joi Hoy

Saady Sapaan Naal Yarany

Saady Aang Aang Zehr Charya

Sada Dard Koi Na Jaany



ایک ترانہ یاد ہے مجھ کو بچپن سے 

بےچینی ہو تو دوہرا لیتا ہوں میں 

تم چاہو تو اس کو پاگل پن سمجھو 

ہاں تصویر کو نظم سنا لیتا ہوں میں

Aik Tarana Yaad Hai Mujh Ko Bachpan Se

Be Chaini Ho To Dohra Leta Houn Main

Tum Chao Tou IsKO Pagal Pan Samjho

Haan Tasveer Ko Nazam Suna Leta Houn Main



دل سیاہ کو گمان گزرا ہے

آس پاس کہیں وہ مہربان گزرا ہے

رقیب کے ہاتھوں میں ہاتھ ڈالے

باہر گلی سے اک بےوفا کا پیمان گزرا ہے

Dil Saya Ko Guman Guzra Hai

Aas Paas Kahen Wo Mehrban Guzra Hai

Raqeeb K Hathon Mein Hath Daaly

Bahir Gali Se Aik Bewafa Ka Peyman Guzra Hai


Judai Poetry|Judai Shayari|Best Judai Poetry


مجھ میں کتنے راز ہیں  بتاوں کیا

بند ایک مدت سے ہوں کھل جاوں کیا؟

عاجزی، منت، خوشامد التجا

اور میں کیا کیا کروں، مر جاوں کیا؟

Mujh Mein Kitny Raaz Hain Bataun Kya

Band Aik Mudat Se Khul Jaun Kya

Ajzi,Minat,Khushamad Ilteja

Aur Main Kya Karun,Mar Jaun Kya



قیدِ تنہائی کا اسیر نہیں ہوں میں 

مبحت بھیک نہیں حقیر نہیں ہوں میں 

کچھ تو مروت لاؤ لہجے میں اپنے 

جانتا ہوں تیرے دل کے قریب نہیں ہوں میں

Qaid e Tanhai Ka Aseer Nahi Houn Main

Mohabbat Bheek Nahi,Haqeer Nahi Houn Main

Kuch Tou Marawat Lao Lehjy Mein Aapne

Janta Hun Tere Dil K Qareeb Nahi Hun Main



رابطوں کے حصار سے نکلے

بے وجہ انتظار سے نکلے

جس کو  بس ایک ہی کا ہونا ہے

دوسروں کے شمار سے نکلے

Rabton K Hasaar Se Nikly

Be Waja Intezar  e Nikly

Jisko Bas Aik Hi Ka Hona Hai

Dosroon K Shumar e Nikly



آنکهوں کا رنگ،بات کا لہجہ بدل گیا

وه شخص ایک شام میں کتنا بدل گیا

شاید وفا کے کهیل سے اکتا گیا تها وه

منزل کے پاس آکے جو رستہ بدل گیا

Ankhon Ka Rang,Baat Ka Lehja Badal Geya

Wo Shakhs Aik Sham Mein Kitna Badal Geya

Shyd Wafa K Khel Se Ukta Geya Tha Wo

Manzil K Paas Aa K Jo Rasta Badal Geya



سنا ھے

زمیں پر وھی لوگ ملتے ھیں

جن کو کبھی آسمانوں کے اُس پار

رُوحوں کے میلے میں

ایک دُوسرے کی محبت ملی ھو.

Suna Hai

Zameen Par Wo Hi Log Milty Hain

Jinko Kabhi Aasmanon K Us Paar

Rohon K Meyly Mein

Aik Dosry Ki Mohabbat Mili Ho



اتنا مانوس نہیں ہو جاتے

پھر بچھڑ جانے پہ دکھ ہوتا ہے

ایک دن ہو تو گزر بھی جائے

روز مر جانے پہ دکھ ہوتا ہے

Itna Manos Nahi Ho Jaty

Phr Bichar Jany Pe Dukh Hota Hai

Aik Din Ho Tou Guzzar Bhe Jaay

Roz Mar Jany Pe  Dukh Hota Hai



دکھ بڑی ذاتی 

چیز ہوتے ہیــــں 

جو سب سے 

نہیـں بانٹے جاتے 

اور نہ بانٹنے چاہئیں

Dukh Bari Zati

Cheez Hoty Hain

Jo Sab Se

Nahi Banty Jaty

Aur Na Bant'ny Chaiye



اس سے پہلے بھی روایات میں آیا ہوا ہے

عشق کا نام فسادات میں آیا ہوا ہے

وہ مرے دل میں بہت دیر نہیں ٹھہرے گا

شہر کا شخص ہے دیہات میں آیا ہوا ہے

Is Se Pehly Bhe Rawayat Mein Aya Hova Hai

Ishq Ka Naam Fasadaat Mein Aya Hova Hai

Wo Mere Dil Mein Boht Dair Nahi Tehry Ga

Shehr Ka Shakhs Hai Dehat Mein Aya Hova Hai



کوئی بھی شکل مرے دل میں اتر سکتی ہے

اک رفاقت میں کہاں عمر گزر سکتی ہے 

تجھ سے کچھ اور تعلق بھی ضروری ہے مرا

یہ محبت تو کسی وقت بھی مر سکتی ہے

Koi Bhe Shakal Mere Dil Mein Utar Sakti Hai

Ek Rafaqat Mein Kahan Umar Guzzr Sakti Hai

Tujh Se Kuch Aur Talaq Bhe Zrooori Hai Mera

Ye Mohabbat Tou Kisi Waqt Bhe Mar Sakti Hai



تھی جتنی بساط کی پرستش

تم بھی تو کوئی خدا نہیں تھے

حد ہوتی ہے طنز کی بھی آخر

ہم تیرے نہیں تھے جا نہیں تھے

Thi Jitni Basaat Ki Purstish

Tum Bhe Tou Koi Khuda Nahi Thy

Had Hoti Hai Tanz Ki Bhe Akhir

Hum Tere Nahi Thy Ja Nahi Thy

Post a comment

0 Comments